banner image

Home ur Surah Al Ala ayat 13 Translation Tafsir

اَلْاَعْلٰی

Al Ala

HR Background

سَیَذَّكَّرُ مَنْ یَّخْشٰى(10)وَ یَتَجَنَّبُهَا الْاَشْقَى(11)الَّذِیْ یَصْلَى النَّارَ الْكُبْرٰى(12)ثُمَّ لَا یَمُوْتُ فِیْهَا وَ لَا یَحْیٰى(13)

ترجمہ: کنزالایمان عنقریب نصیحت مانے گا جو ڈرتا ہے ۔ اور اس سے وہ بڑا بدبخت دور رہے گا ۔ جو سب سے بڑی آگ میں جائے گا۔ پھر نہ اس میں مرے اور نہ جئے ۔ ترجمہ: کنزالعرفان عنقریب وہ نصیحت مانے گاجو ڈرتا ہے ۔ اور نصیحت سے وہ بڑا بدبخت دور رہے گا۔ جو سب سے بڑی آگ میں جائے گا۔ پھروہ نہ اس میں مرے گا اور نہ جئے گا۔

تفسیر: ‎صراط الجنان

{سَیَذَّكَّرُ مَنْ یَّخْشٰى: عنقریب وہ نصیحت مانے گاجو ڈرتا ہے۔} اس آیت اور ا س کے بعد والی تین آیات کا خلاصہ یہ ہے کہ اے حبیب! صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہ وَ سَلَّمَ، عنقریب آپ کی نصیحت وہ مانے گا جو اللّٰہ تعالیٰ سے اور اپنے برے انجام سے ڈرتا ہے اور آپ کی نصیحت سے وہ دور ہو گااور اس نصیحت کو قبول نہیں  کرے گا جو آپ کا دشمن بن کر بڑا بدبخت کافر ہے ،جیسے ولید بن مغیرہ اور ابو جہل وغیرہ اور وہ بد بخت کافر جہنم کی سب سے بڑی آگ میں  جائے گا ،پھروہ نہ اس میں  مرے گا کہ مر کر ہی عذاب سے چھوٹ سکے اور نہ ایسا جینا جئے گا جس سے کچھ بھی آرام پاسکے۔( مدارک،الاعلی،تحت الآیۃ:۱۰-۱۳،ص۱۳۴۱، روح البیان،الاعلی،تحت الآیۃ:۱۰-۱۳،۱۰ / ۴۰۸-۴۰۹،ملتقطاً)

             اس آیت سے معلوم ہوا کہ جو شخص نصیحت کو تسلیم کرتا ہے وہ خَشیَت ِ الٰہی کے زیور سے آراستہ ہے ۔